پی ٹی اے نے غیرقانونی جی ایس ایم بوسٹر کی درآمد کو ختم کرنے کی کوشش کر رہی ہے.

پاکستان ٹیلی مواصلات اتھارٹی (پی ٹی اے) نے بدھ کے روز فیڈرل بورڈ آف ریونیو کو جی ایس ایم بوسٹرز کی غیرقانونی درآمد بند کرنے کی اپیل کی ہے جو موبائل کمپنیوں کے فریکوینسی بینڈ میں مداخلت کا سبب بنتا ہے اور اس علاقے میں جہاں یہ یمپلیفائر لگائے جاتے ہیں ان میں سیلولر خدمات کا معیار خراب ہوتا ہے۔

ایف بی آر ممبر کسٹم کو لکھے گئے خط میں ٹیلی کام اتھارٹی نے کہا ہے کہ صرف لائسنس شدہ سیلولر موبائل آپریٹرز (سی ایم اوز) صارفین کے احاطے میں ایسے آلات نصب کرنے کے مجاز ہیں۔

پی ٹی اے نے یہ بھی کہا ہے کہ جی ایس ایم ایمپلیفائر کی اکثریت چینی ہے اور ان پر ماڈل نمبر لکھا ہوا نہیں ہے۔

یہ خط موبائل کمپنیوں کی شکایات کے بعد لکھا گیا ہے کہ اشاروں کے ناقص معیار سے متعلق تقریبا 25 فیصد شکایات ان علاقوں میں جی ایس ایم ایمپلیفائر لگانے کی وجہ سے تھیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں