رفاقتوں کے نئے خواب خوش نما ہیں مگر

رفاقتوں کے نئے خواب خوش نما ہیں مگر
گزر چکا ہے ترے اعتبار کا موسم

اپنا تبصرہ بھیجیں